ہوم / کپتان سے کپتان تک / وسیم اکرم کتنی مرتبہ ٹیم کے کپتان بنے اورٹیم کی کارکردگی کیا رہی؟

وسیم اکرم کتنی مرتبہ ٹیم کے کپتان بنے اورٹیم کی کارکردگی کیا رہی؟


قومی کرکٹ ٹیم کے سابق فاسٹ بولر وسیم اکرم دو مرتبہ قومی ٹیم کے کپتان بنے ان کی کپتانی کا پہلا دور16 اپریل سے شروع ہوکر5 دسمبر1993 پر ختم ہوا۔ وہ پہلے دور میں صرف آٹھ ماہ کپتان رہے۔ اس عرصے میں انہوں نے دو سیریز کھیلیں جس میں ایک میں فتح ، ایک میں شکست ہوئی۔ پانچ میچز میں ایک میں ٹیم کو کامیابی نصیب ہوئی جبکہ دو میں شکست کا سامنا کرنا پڑا

"اسپورٹس لنک” کے تازہ ایڈیشن میں شائع ہونے والے مقبول سلسلے”کپتان سے کپتان تک” میں سابق کپتان وسیم اکرم کے دور میں قومی ٹیم کی کارکردگی کاجائزہ پیش کیا گیا ہے جو اسپورٹس بالخصوص کرکٹ کے شوقین افراد کیلئے معلومات کا خزانہ ہے۔واضح رہے کہ ’’اسپورٹس لنک‘‘ پاکستان کی تاریخ کے تمام کپتانوں کے ادوارکاجامع جائزہ،دیگرکپتانوں سے موازنہ قسط وارشائع کررہاہے۔

تازہ ایڈیشن میں شائع ہونے والی 12ویں قسط میں وسیم اکرم کے دوسرے دورِ قیادت کا احوال پیش کیا گیاہے جس کے مطابق 1995ء کی ہوم سیریزمیں سری لنکا کے ہاتھوں بدترین شکست کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ نے رمیزراجہ کو قیاد ت سے ہٹاکرقومی ٹیم کی باگ ڈورایکبار وسیم اکرم کے ہاتھ میں تھمادی۔ جن کے دوسرے دورِ قیادت کی پہلی ٹیسٹ سیریز نومبر1995ء میں کینگروزکے دیس میں شروع ہونے والی ٹیسٹ سیریز تھی۔

اس ٹیسٹ سیریزکے پہلے دونوں میچز ہارنے کے بعد پاکستان ٹیم نے سڈنی میں کھیلے گئے تیسرے ٹیسٹ میچ میں کم بیک کرتے ہوئے74رنز سے کامیابی سمیٹی۔اس میچ میں اعجازاحمد کی سنچری کی بدولت پاکستان ٹیم نے پہلی اننگزمیں299 رنز بنانے کے بعد جوابی اننگزمیں کینگروزکو 257رنزپر آئوٹ کرکے برتری حاصل کی۔جس کے بعد دوسری اننگزمیں 204رنزبناکر آسٹریلیاکو میچ جیتنے کیلئے 247رنزکا ہدف دیا۔جس کے تعاقب میں کپتان مارک ٹیلر کی ففٹی کے باوجود آسٹریلوی ٹیم 172رنزپر ڈھیر ہوگئی۔

آخری ٹیسٹ میچ میں کامیابی نے بورڈکا وسیم اکرم کی قائدانہ صلاحیتوں پر اعتماد مزید بڑھا دیا۔ اس سیریزکے بعد وسیم اکرم کی قیادت میں نیوزی لینڈمیں دورے کا واحد ٹیسٹ میچ بھی کھیلا جس میں 161رنزکے بڑے مارجن سے فتح سمیٹی۔

وسیم اکرم نے اپنے دوسرے دورِ قیادت کے دوران چار ٹیسٹ سیریزمیں پاکستان ٹیم کی قیادت کی جن میں دورۂ آسٹریلیامیں پہلی سیریزمیں ناکامی کے بعد اگلی تینوں میں کامیابی پاکستان کی جھولی میں ڈالی۔

وسیم اکرم کے دوسرے دورِ قیادت کے دوران ٹیسٹ میچوں میں پاکستان ٹیم کی کارکردگی نہایت ہی شاندار رہی جس نے نہ صرف چارمیں سے تین ٹیسٹ سیریز جیتیں بلکہ 9میں سے محض دو شکستوں کے بدلے پانچ ٹیسٹ میچوں میں بھی کامیابی اپنے نام کی۔

’’کپتان سے کپتا ن تک‘‘کی قسط کا مختصر احوال یہاں شائع کیا گیاہے ۔یہ مکمل قسط آپ ’’اسپورٹس لنک‘‘ کے تازہ ایڈیشن میں ملاحظہ کرسکتے ہیں۔


Facebook Comments

یہ متعلقہ مواد بھی پڑھیں

پاکستان اور بھارت کے درمیان زبردست مقابلہ ہوگا:انضمام الحق

پاکستان اور بھارٹ کے درمیان ہائی پریشر میچ کل کھیلا جاہے گا اس مقا بلے …

error: Content is protected !!