ہوم / انٹرویوز / ٹیسٹ ڈیبیو پرعثمان صلاح الدین کے والد کا جذباتی انٹرویو

ٹیسٹ ڈیبیو پرعثمان صلاح الدین کے والد کا جذباتی انٹرویو


آٹھ سال پہلے جب عثمان صلاح الدین کو دورہ ویسٹ انڈیز کیلئے منتخب کیا گیا تو وہ اس وقت سیالکوٹ میں گریڈ ٹو کا میچ کھیل رہے تھے اور وقفے کے دوران اپنے گھر سے آئی ہوئی 55مسڈ کالز دیکھ کر پریشان ہوگئے تھے مگر آج ہیڈنگلے میں ٹیسٹ ڈیبیو کرنے سے قبل عثمان کو کوئی مسڈ کال نہیں آئی بلکہ ایک دن پہلے ٹیم مینجمنٹ نے انہیں یہ خوشخبری دے دی تھی کہ وہ ہیڈنگلے میں پاکستان کی طرف سے ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے والے 232ویں کھلاڑی بن جائیں گے۔

99فرسٹ کلاس میچز میں چھ ہزار سے زائد رنز بنانے والے عثمان صلاح الدین کیلئے ٹیسٹ کرکٹ کھیلنا اپنے والد کے اس خواب کی تعبیر ہے جو انہوں نے آج سے 44برس قبل دیکھا تھا۔ عثمان کے والد صلاح الدین رانا 82فرسٹ کلاس میچز کھیلنے کیساتھ ساتھ 1974ء میں پاکستان کی انڈر19ٹیم کے ہمراہ انگلینڈ کا دورہ کرچکے ہیں۔ صلاح الدین کیلئے پاکستان کی طرف سے ٹیسٹ کرکٹ کھیلنے کا خواب پورا نہ ہوسکا مگر آج ان کے بیٹے نے اپنے والد کے خواب کو پورا کردیا ہے۔

دیرینہ خواب پورا ہوگیا

اس موقع پر جب ہم نے صلاح الدین رانا سے رابطہ کیا تو ان کاکہنا تھا کہ ’’ یہ دن میرے لیے کسی عید سے کم نہیں ہے کیونکہ ہم لوگ بہت برسوں سے امید لگائے بیٹھے تھے کہ ہمارے گھر کا کوئی فرد پاکستانی ٹیم کا حصہ بنے‘‘عثمان صلاح الدین کو جہاں ٹیسٹ کیپ ملنے کی خوشی ہے وہاں وہ اس بات پر بھی مسرور ہیں کہ ان کے والد کا درینہ خواب پورا ہوگیا ہے۔

عثمان صلاح الدین کے والد صلاح الدین فرحان نثارکو انٹرویو دے رہے ہیں

’’کسی باپ کیلئے اس سے زیادہ خوشی کی بات کوئی اور نہیں ہوسکتی کہ جو کام وہ خود نہ کرپایا اسے اس کا بیٹا پایہ تکمیل تک پہنچادے اور کرکٹ کے کھیل میں کسی سابق فرسٹ کلاس کرکٹر کی اس سے بڑی خواہش کوئی اور نہیں ہوسکتی کہ اس کا بیٹا بین الاقوامی سطح پر اپنے ملک کی نمائندگی کا اعزاز حاصل کرے‘‘

ٹیسٹ کیپ کے حصول اور والد کے خواب کے حوالے سے عثمان کا کہنا تھا کہ ’’اس کے پیچھے کافی لمبی کہانی اور جدوجہد ہے کیونکہ میرے والد اچھے کرکٹر ہونے اور انڈر19کی سطح پر پاکستان کی نمائندگی کرنے کے باوجود ٹیسٹ کرکٹ نہیں کھیل سکے اور میرے دادا کا اس دکھ سے انتقال ہوگیا تھا کہ میرا بیٹا پاکستان کیلئے نہیں کھیل سکا۔اس لیے آج میرے والد بہت خوش ہیں کہ ان کا بیٹا ٹیسٹ کرکٹ کھیل رہا ہے‘‘

صلاح الدین رانا کا کہنا ہے کہ عثمان ایک پیدائشی کرکٹر ہے اور اس حوالے سے انہوں نے ایک دلچسپ واقع بھی سنایا کہ’’ جس دن عثمان کی پیدائش ہوئی تو اسی وقت میری والدہ نے کہا کہ ’’ایک کھلاڑی اور آگیا ہے‘‘یہ جملہ بہت توجہ طلب ہے کیونکہ میرے ماشاء اللہ دو بیٹے اور بھی ہیں لیکن عثمان کا کرکٹ کی طرف آجانا کچھ بتاتا ہے کہ اس کیلئے اسی چیز کا انتخاب ہوچکا تھا‘‘

عثمان صلاح الدین کی کرکٹ کی سمجھ کے حوالے سے ان کے والد کا کہنا تھا کہ ’’ایک دن عامر سہیل ہمارے گھر آئے جو چند دن پہلے راجیش چوہان کی گیند پر ایک میچ میں بولڈ ہوئے تھے تو ان کے سامنے عثمان نے ان کی غلطی کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ’’ ابو ان کی تو ٹانگ ہی اس شاٹ پر غلط آئی ہے آپ جس طرح بتاتے ہیں یہ تو اس کے برعکس شاٹ کھیلے ہیں‘‘ تو اس سے آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کم عمری میں ہی اسے کرکٹ کی کتنی سمجھ اور شوق تھا‘‘

عثمان صلاح الدین اگرچہ ڈیبیو ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں بڑا اسکورنہیں کرسکے ہیں مگر اُس سے ٹیسٹ ڈیبیو پر اچھی کارکردگی کی توقع ہے کیونکہ فرسٹ کلاس کرکٹ میں 99میچز کے تجربے کے ساتھ وہ میدان میں اُتر ے ہیں۔

عثمان صلاح الدین کے والد کو بھی اپنے ہونہار بیٹے سے بہت زیادہ توقعات وابستہ ہیں جوکہتے ہیں کہ ’’میں نے عثمان میں جو صلاحیتیں دیکھی ہیں انہیں سامنے رکھتے ہوئے مجھے اُمید ہے کہ یہ پاکستان کیلئے بہت سے ریکارڈ بنائے گا۔ انشاء اللہ اور پاکستان کرکٹ میں جو بڑے ریکارڈز آج تک نہیں بن سکے وہ بھی یہ بنائے گاکیونکہ یہ ہماری پچاس سال کی جدوجہد کا ثمر ہے اس لیے اتنی جلدی اللہ تعالیٰ اسے واپس نہیں کریں گے بلکہ بہت سی کامیابیاں عثمان کے حصے میں آئیں گی‘‘


Facebook Comments

error: Content is protected !!