ہوم / ٹاپ فائیو / لارڈزٹیسٹ میں پاکستانی کرکٹرز کی 6 نایاب پرفارمنس

لارڈزٹیسٹ میں پاکستانی کرکٹرز کی 6 نایاب پرفارمنس


پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان کھیلے جارہے پہلے لارڈز ٹیسٹ کے تیسرے دن کے کھیل میں پاکستان نے بابراعظم کے بیٹنگ کیلئے کریز پر نہ آنے کے سبب پاکستان کو اپنی پہلی اننگز 363/9*کے اسکورپرختم کرنا پڑی۔ اس میچ میں اب تک کئی اہم واقعات اور پہلو سامنے آئے ہیں جو تاریخ میں شاذونادر ہی رونما ہوئے۔ جن پر یہاں ’اسپورٹس لنک‘ میگزین کے تعاون سے اس رپورٹ میں روشنی ڈالی جارہی ہے۔ان کی مکمل تفصیل ’میگزین‘ میں ہی شائع کی جائے گی۔

پاکستانی کرکٹرز کی 6 نایاب پرفارمنس

1.  363رنز لارڈزکے تاریخی وینیو پر پاکستان کے مجموعی طورپر تیسرے زیادہ رنزہیں۔وہ صرف دو بارہی اس سے زائد رنز بناسکی ہے جس نے جولائی2006ء میں 445اور 1982ء میں 428/8dرنزبنائے تھے۔

2.  انگلینڈکے 184رنزکے جواب میں 363رنزبناکر پاکستان نے 179رنزکی برتری حاصل کی جو پاکستان کی لارڈزکے مقام پر میزبان ٹیم کے خلاف سب سے بڑی جبکہ مجموعی طورپر دوسری بیٹنگ میں انگلینڈکے کسی بھی وینیو پر پانچویں بڑی برتری ہے۔

3. پاکستان ٹیم نے محمد عباس اور حسن علی شاندار بولنگ کی بدولت انگلینڈکو184رنزپر ڈھیر کیا جو اُن کا پاکستان کے خلاف لارڈز کے مقام پر دوسراکم ترین اسکورہے۔اس سے کم اسکور(175)رنزپر وہ صرف ایکبار1992ء میں آئوٹ ہوچکی ہے۔

4. پاکستانی بلے باز بابراعظم 58رنزکی شاندار اننگز کھیل کر ریٹائرڈہرٹ ہوئے۔یہ اُن کے ٹیسٹ کیریئر میں پہلا موقع تھا کہ وہ لگاتار دو ٹیسٹ اننگزمیں ففٹی پلس اسکور کرنے میں کامیاب رہے۔وہ لارڈز ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں58رنزبنانے سے قبل آئرلینڈکے خلاف گزشتہ ٹیسٹ کی آخری اننگزمیں 59رنز بناچکے تھے۔

5. لارڈز ٹیسٹ کی پہلی اننگزمیں محمد عباس نے 23اور حسن علی نے 51رنز دیکر چار چار وکٹیں حاصل کیں جو مجموعی طورپر چوتھا جبکہ 1996ء کے بعد پہلا واقعہ تھا جب لارڈز کے مقام پر ایک ٹیم اننگزمیں دو پاکستانی بولروں نے چار ،چار وکٹوں کا کارنامہ سرانجام دیا۔اس سے قبل 1954ء میں فضل محمود(4/54)اور خان محمد(5/61)، 1996ء کے ایک ہی ٹیسٹ کے دوران انگلینڈکی پہلی اننگزمیں وقاریونس (4/69)اور عطاء الرحمن(4/50)جبکہ دوسری اننگزمیں مشتاق احمد (5/57)اور وقاریونس(4/85) کی کارکردگی کا مظاہرہ کیاتھا۔

6. چار پاکستانی بلے بازوں کی ففٹیوں کا پہلا واقعہ

لارڈز ٹیسٹ میں پاکستان کی پہلی اننگزکے دوران اوپنر اظہرعلی کے 50رنزکے بعد اسد شفیق نے 59اور بابراعظم کے 68رنزبنائے جبکہ ساتویں نمبرپرآنے والے شاداب خان نے بھی 52رنزکی عمدہ باری کھیلی ۔یہ پاکستانی تاریخ میں پہلا موقع تھا کہ لارڈزکے مقام پر اُس کے چار بلے بازوں نے ایک ہی اننگزکے دوران ففٹی پلس اسکورزکئے۔اس سے قبل چار مختلف مواقعوں (1992، 1992، 1995 اور 2006ء ) پرایک ہی اننگزکے دوران تین تین پاکستانی بلے باز یہ کارنامہ سرانجام دے چکے تھے۔


Facebook Comments

error: Content is protected !!